Drama Review | Parizaad | Lyrics in Urdu

Parizaad, the new HUM TV drama is based on Hashim Nadeem’s novel of the same name. For brief summary of the novel and my review of the same, read here.

Parizaad’s OST is one of the best so far. It doesn’t just have a catchy tune, and a perfect voice. It’s lyrics is what makes it so perfect, almost making me think that Parizaad is singing it himself.

Here goes the lyrics:

حسن كے جزیروں میں
روپ كے کناروں پر
ریشمی اندھرے ہیں
سرمئی اجالے ہیں

اک ناز آفرین دِل پر
قبضہ جمائے بیٹھی ہے
جس کی نیل آنکھوں میں
نیلگوں سے پیالے ہیں

نا پوچھ پری زادوں سے
یہ ہجر کیسے جھیلا ہے
یہ تن بدن تو چھلنی ہے
اور روح پر بھی چھالے ہیں

کیسے جان پاؤ گے
عشق میں کیا گزری ہے
کتنے زخم کھائے ہیں
کتنے درد پالے ہیں

خواہشوں كے جنگل میں
حسرتوں كے بستر پر
جسم تو گلابی ہیں
اور دِل سیاہ کالے ہیں

میں روپ کا پجاری ہوں
میں لفظ کا بھکاری ہوں
لیکن جہاں میں بستا ہوں

وہاں مندروں پہ تارے ہیں

کیا عشق وہ نبھائیں گے
کیا حُسْن کو سراہیں گے
تاریک جن كے چہرے ہیں
مقدر ان کے جاگے ہیں

دشمنوں سے کیا شکوہ
کیا گلہ رقیبوں سے
یہ سانپ آستینوں میں
ہم نے خود ہی پالے ہیں

نا پوچھ پری زادوں سے
یہ ہجر کیسے جھیلا ہے
یہ تن بدن تو چھلنی ہے
اور روح پر بھی چھالے ہیں

کیسے جان پاؤ گے
عشق میں کیا گزری ہے
کتنے زخم کھائے ہیں
کتنے درد پالے ہیں

Assalamualaikum,

Shabana Mukhtar

Your comments and opinion matter. Please leave a message. Cheers!