Chahal Rabbana Urdu | Dua #1 | چہل ربّنا ۱

Chahal Rabbana Dua #1 with Urdu Translation
Chahal Rabbana Dua #1 with Urdu Translation

چہل ربنا دعا

رَبَّنا تَقَبَّل مِنّا ۖ إِنَّكَ أَنتَ السَّميعُ العَليمُ  

دعا کا ترجمہ

اے پروردگار، ہم سے یہ خدمت قبول فرما۔ بےشک تو سننے والا (اور) جاننے والا ہے 

 آیت

وَإِذ يَرفَعُ ابراہیم القَواعِدَ مِنَ البَيتِ وَإِسمٰعيلُ رَبَّنا تَقَبَّل مِنّا ۖ إِنَّكَ أَنتَ السَّميعُ العَليمُ 

 آیت کا ترجمہ

اور جب ابراہیم اور اسمٰعیل بیت الله کی بنیادیں اونچی کر رہے تھے (تو دعا کئے جاتے تھے کہ) اے پروردگار، ہم سے یہ خدمت قبول فرما۔ بےشک تو سننے والا (اور) جاننے والا ہے 

ترتیب

سورہ بقرۃ آیت ۱۲۷

شان نزول

 

تفسیر اور علمی نکات

خلاصہ تفسیر

اور وہ وقت بھی یادکرنے کے قابل ہے جبکہ اٹھار ہے تھے ابراہیم علیہ اسلام دیواریں خانہ کعبہ کی اور ان کے ساتھ اسمعیل علیہ السلام بھی رم(ا ور یہ بھی کہتے جاتے تھے کہ) اے ہمارے پر ور دگار ری خدمت ہم سے قبول فرمائیے ، بلاشبہ آپ خوب  سننے والے ، جاننے والے میں رہماری دعاء کو سنتے ہیں ہماری ہیں کو جانتے ہیں)

معارف القرآن جلد اول: ۳۲۵

علمی نکات

حضرت ابراہیم علیہ اسلام کی دعائیں دعاء کو مشروع لفظ رب سے کیا ہے ،جس کے معنی ہیں  “اے میرے پالنے والے “ ان الفاظ میں دعا مانگنے کا سلیقہ سکھایا ہے، کہ خود یہ الفاظ حق تعالی کی رحمت اور لطف و کرم کو متوجہ کرنے پر موثر دوائی ہیں۔

ربنا تقبل منا: اس سے ہمیں اپنے نیک عمل پر بھروسہ اور قناعت نہ کرنے کی تعلیم ملتی ہے۔

حضرت خلیل اللہ علیہ الصلوۃ والسلام نے حکم ربانی کی تعمیل میں ملک شام کے ہرے بھرے خوش منظر خطہ کو چھوڑ کر مکہ مکرمہ کے خشک پہاڑوں کے درمیان اپنے اہل وعیال کولا ڈالا، اور بیت اللہ کی تعمیر میں اپنی پوری توانائی خرچ کی۔

یہ موقع ایسا تھا کہ ایسے مجاہدے کرنے والے کے دل میں عجب پیدا ہوتا تو وہ اپنے عمل کو بہت کچھ قابل قدر سمجھتا ، لیکن یہاں حضرت خلیل اللہ علیہ الصلوۃ والسلام ہیں ، رب العزت کی بارگاہ عزت وجلال کو پہچاننے والے ہیں کہ کسی انسان سے اللہ تعالی کے شایان شان عبادت وات ممکن نہیں ہر شخص اپنی قوت و ہمت کی مقدار سے کام کرتا ہے، اس لئے ضرورت ہے کہ کوئی بھی بڑے سے بڑا عمل کرے تو اس پر ناز نہ کرے ، بلکہ الحاح و زاری کے ساتھ دعا کرے کہ میرا یہ عمل قبول ہو جائے ، جیسا کہ حضرت ابراہیم علیہ السلام نے بناء بیت اللہ کے عمل کے متعلق میں عار فرمائی کہ

اے ہمارے پروردگار آپ ہمارے اس عمل کو قبول فرمالیں کیونکہ آپ تو سننے والے اور جاننے والے ہیں ہماری دعاء کو سنتے ہیں اور ہماری نیتوں کو جانتے ہیں۔ ،

معارف القرآن جلد اول: ۳۲۵

 

واللہ اعلم بالصواب

شبانہ مختار